بشارالاسد کی برطانوی رویے پر تنقید

آخری وقت اشاعت:  اتوار 3 مارچ 2013 ,‭ 01:23 GMT 06:23 PST

شام کے صدر بشارالاسد نے ملک میں جاری بحران کے خاتمے کے لیے برطانوی حکومت کی ’دھونس‘ اور ’سادگی‘ کے رویے پر تنقید کی ہے۔

برطانوی اخبار ’سنڈے ٹائمز‘ کو دیے گئے انٹرویو میں صدر بشار الاسد کا کہنا تھا کہ برطانیہ شام کی صورت حال کو مسلح کرنے پر مصر ہے۔

صدر بشارالاسد نے ایک بار پھر شام کی حزب مخالف کو مشروط مذاکرات کی پیشکش کرتے ہوئے اپنے مستعفی ہونے کی خبروں کو مسترد کر دیا۔

شام کے صدر نے ’سنڈے ٹائمز‘ کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ’ہم برطانیہ سے کس طرح کہہ سکتے ہیں کہ وہ اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے اپنا کردار ادا کرے جب وہ اسے مسلح کرنے پر مصر ہے؟‘

انہوں نے کہا کہ ہم کس طرح یہ امید کر سکتے ہیں کہ برطانیہ شام میں جاری تشدد کو کم کر سکتا ہے جب وہ خود دہشت گردوں کو مسلح کرنا چاہتا ہے۔

دوسری جانب برطانیہ کا کہنا ہے کہ وہ شام کی حزب مخالف کی حمایت کرتا ہے تاہم وہ باغیوں کو ہتھیار فراہم نہیں کرتا۔

واضح رہے کہ برطانیہ کے وزیرِ خارجہ ویلم ہیگ نے روم میں شام کے دوست ممالک کے ایک اجلاس میں کہا تھا کہ مستقبل میں شام میں فوجی امداد ممکن ہے۔

شام میں صدر بشارالاسد کے خلاف شروع ہونے والے مظاہروں میں ایک اندازے کے مطابق اب تک ستر ہزار کے قریب افراد ہلاک اور سینکڑوں نقل مکانی کر چکےہیں۔

ادھر شام میں حکومتی افواج اور باغیوں کے درمیان لڑائی جاری ہے۔

شام میں حکومت مخالف کارکنوں کا کہنا ہے کہ ملک کے ایک شمالی صوبے رقہ کے دارالحکومت میں سرکاری فوج اور باغیوں کے درمیان جھڑپوں میں کئی درجن افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

حکومت مخالف کارکنوں کے مطابق سرکاری فوج نے شہر کے کئی علاقوں میں گولہ باری کی۔

شام کے دوسرے علاقوں داریا، دمشق کے نواح اور حلب شہر کے قریب پولیس اکیڈمی میں بھی جھڑپوں کی اطلاعات ہیں۔

یہ جھڑپیں ایسے وقت ہوئیں جب امریکہ کے نئے وزیر خارجہ جان کیری شام کے تنازع کے حل کے لیے ترکی کے دورے پر ہیں۔

جان کیری نے جمعے کو ترکی کے دارالحکومت انقرہ میں کہا ’امریکہ اور ترکی یہ سمجھتے ہیں کہ پہلی ترجیح سیاسی حل ہے۔ ہم زندگیاں بچانا چاہتے ہیں‘۔

بیروت میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار جِم میور کا کہنا ہے کہ شام کے تنازع کے حل کے لیے سفارتی کوششوں کے ساتھ ساتھ تشدد بھی جاری ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔