’ایران یورنیم افزودگی دگنی کرنے کے لیے تیار‘

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 17 نومبر 2012 ,‭ 00:21 GMT 05:21 PST

اقوام متحدہ کے جوہری پروگرام کے نگران ادارے کا کہنا ہے کہ ایران زیرِ زمین یورنیم کی افزودگی دگنا کرنے کے لیے تیار ہے۔

انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی (آئی اے ای اے) کی خفیہ طور پر منظرِ عام پر آنے والی ایک رپورٹ کے مطابق ایران نے قم شہر کے مضافات میں واقع جوہری مرکز فردو میں دو ہزار سات سو چوراسی سنٹری فیوج ہیں جس کا مطلب ہے کہ ایران جلد ہی آپریٹنگ سسٹمز کی تعداد کو سات سو سے چودہ سو تک پہنچا سکتا ہے۔

ایران کہتا رہا ہے کہ اس کا جوہری پروگرام پرامن مقاصد کے لیے ہے جبکہ مغربی ممالک یہ تسلیم کرنے کو تیار نہیں ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ ایران افزودہ یورینیم کو ہتھیاروں کی تیاری میں استعمال کر سکتا ہے۔

واضح رہے کہ ایران کی یورنیم افزودگی کے حوالے سے امریکہ، برطانیہ، فرانس، چین، روس اور جرمنی کے مابین رواں برس ہونے والے مزاکرات کامیاب نہیں ہوئے تھے۔

آئی اے ای اے کی خفیہ طور پر منظرِ عام پر آنے والی رپورٹ اس کے معائینہ کاروں کی تشخیص پر مشتمل ہوتی ہے جو فردو کا دورہ کرتے رہتے ہیں۔

ایران کے مطابق قم کے جوہری مرکز فرود میں سویلین استعمال کے لیے یورینیم کی بیس فیصد تک افزودگی کی جا رہی ہے۔

آئی اے ای اے کی خفیہ طور پر منظرِعام پر آنے والی رپورٹ کے مطابق ایران نے اگست دو ہزار دس سے اب تک دو سو تینتیس کلو گرام اعلیٰ درجے کی افزودہ یورینیم تیار کی ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔