چین میں قیادت کی تبدیلی کے عمل کا آغاز

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 8 نومبر 2012 ,‭ 07:25 GMT 12:25 PST

’ہمیں اپنے اہداف کو اونچا کرنا ہوگا، مزید محنت کرنی ہوگی‘ صدر ہو جنتاؤ

چین کے صدر ہو جنتاؤ نے کمیونسٹ پارٹی میں ہونے والے بدعنوانی کے بارے میں تنبیہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر بد عنوانی کے مسئلے کو نہ سلجھایا گیا تو یہ پارٹی کی تباہی کا باعث بن سکتا ہے۔

چین کے صدرنے یہ بات کمیونسٹ پارٹی کی کانگرس کے اجلاس کا افتتاح کے موقع پر اپنے خطاب میں کہی جس میں پارٹی کی قیادت نئے رہنماؤں کے حوالے کی جائے گی۔

تقریباً دو ہزار مندوبین کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے صدر نے کہا کہ چین کو ایسے مواقع اور چیلنجز کا سامنا ہے جن کی ماضی میں مثال نہیں ملتی اور قوم کو اپنے اہداف بلند رکھنے ہوں گے اور زیادہ محنت کرنا ہوگی۔

کمیونسٹ پارٹی کا یہ اجلاس ایک ہفتے تک جاری رہےگا۔

چینی دارالحکومت میں اس موقع پر سکیورٹی کے انتظامات سخت کر دیے گئے ہیں اور انسانی حقوق کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ بہت سے حکومت مخالفین کو گھروں میں نظر بند یا گرفتار کر لیا گیا ہے۔

’گریٹ ہال آف چائنا‘ میں خطاب کرتے ہوئے چینی رہنما نے کہا کہ چین کو بدلتے داخلی اور عالمی ماحول سے مطابقت رکھنا ہوگی۔

ان کا کہنا تھا ’ ہمیں اپنے اہداف کو اونچا کرنا ہوگا، مزید محنت کرنی ہوگی اور سائنسی ترقی کو جاری رکھنا ہوگا تاکہ ہم سماجی ہم آہنگی کو بڑھا سکیں اور لوگوں کی زندگی کو بہتر بنا سکیں۔‘

"جو کوئی بھی قانون کی خلاف ورزی کرتا ہے اسے انصاف کے کٹہرے میں لایا جانا چاہیے چاہے وہ کوئی اہم افسر ہو یا کسی اہم عہدے پر ہو"

صدر ہو جنتاؤ

صدرہو جنتاؤ نے تجویز دی کہ چینی ترقی کو زیادہ متوازن اور دیر پا بنانے کی ضرورت ہے اور ملک کو بدعنوانی کے سنگین چیلنج کا سامنا کرنا چاہیے۔

بدعنوانی سے متعلق انھوں نے کہا کہ اگر اس مسئلے سے موثر انداز میں نہ نمٹا گیا تو یہ پارٹی اور ملک دونوں کے لیے مہلک ہو سکتا ہے۔

صدر نے کہا کہ جو کوئی بھی قانون کی خلاف ورزی کرتا ہے اسے انصاف کے کٹہرے میں لایا جانا چاہیے چاہے وہ کوئی اہم افسر ہو یا کسی اہم عہدے پر ہو۔

گذشتہ چند ماہ میں چین کی سیاسی قیادت کو ایک سابق وزیر بو ژلائی کے بدعنوانی سکینڈل نے ہلا کر رکھ دیا ہے۔ انھیں کرپشن الزامات کا سامنا ہے جبکہ ان کی بیوی کو ایک برطانوی تاجر کے قتل کے جرم میں قید ہو چکی ہے۔

دوسری جانب چین بھر میں سرکاری عہدے داروں کی بدعنوانی کے واقعات عوام میں شدید غصے کا باعث بنے ہیں اور کئی مظاہروں کی بھی اطلاعات ہیں۔

پارٹی کے اجلاس کے لیے متعارف کرائی گئی ویب سائٹوں پر ہزاروں افراد نے بدعنوانی کے بارے میں اصلاحی اقدامات کی ضرورت پر زور دیا ہے۔

گذشتہ چند ماہ میں چین کی اقتصادی ترقی کی رفتار میں بھی کمی آئی ہے جبکہ معاشرے میں مالی تضاد اور آبادی کی اوسط عمر میں اضافہ بھی ملک کے لیے درپیش مسائل ہیں۔

دوسری جانب بین الاقوامی امور کے سلسلے میں صدر نے مشرقی اور جنوبی چینی سمندروں میں علاقائی تنازعوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ چین کو اپنے حقوق کا جارحانہ دفاع کرنا چاہیے اور ایک بحری طاقت بننا چاہیے۔

پارٹی کا یہ اجلاس ایک ہفتے تک جاری رہے گا اور عالمی مبصرین مستقبل کی پالیسیوں کا اندازہ لگانے کے لیے اس اجلاس پر کافی توجہ دیں گے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔