BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Thursday, 26 February, 2009, 19:24 GMT 00:24 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
زرداری نفاق کی علامت:وال سٹریٹ
 

 
 
 زرداری
سیکیورٹی خدشات کی وجہ زرداری اپنے آپ کو ریڈ زون تک محدود رکھتے ہیں
امریکی اخبار وال سٹریٹ جرنل نے اپنے ایک تازہ مضمون میں صدر آصف علی زرداری کی شخصیت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا ہے کہ وہ منتخب ہوتے وقت کی ایک طویل آمریت کے بعد ملک کی بکھرے ہوئے دھارے کو یکجا کرنے کے عزم کے ساتھ آئے تھے لیکن اب وہ نفاق کی علامت بنتے جا رہے ہیں۔

اخبار کے تجزیے کے مطابق زرداری اپنے دوست دشمن دونوں کی تنقید کا نشانہ بن رہے ہیں۔ بےنظیر بھٹو مرحومہ کے کئی قریبی ساتھی جو حکومت میں بھی شامل ہیں ناراض ہیں اور ان سے براہ راست رابطہ کرنے سے گریز کرتے ہیں۔ اخبار نے کئی شاہدین کے حوالے سے بتایا ہے کہ انہوں نے سینئر وزرا کے خلاف اجلاسوں میں نازیبا زبان تک استعمال کی ہے۔

شریف برادران کے خلاف سپریم کورٹ کے فیصلے نے ملک کو ایک مرتبہ پھر سیاسی بحران کی جانب دھکیل دیا ہے۔ کئی سرکاری اہلکاروں اور مغربی سفارت کاروں کے مطابق زرداری کے طرز حکمرانی سے پیدا ہونے والے مسائل حکومت کو کمزور کرنے کے علاوہ مختلف چیلنجوں سے نمٹنے میں آڑے آ رہے ہیں۔

عدالتی فیصلے سے کراچی میں سٹاک مارکیٹ میں گراوٹ آئی۔ امریکہ کو نواز شریف کی جانب سے زرداری کے خلاف احتجاجی مہم چلانے سے تشویش لاحق ہوسکتی ہے۔ نئی اوبامہ انتظامیہ کی ترجیح القاعدہ اور طالبان سے نمٹنا ہے ناکہ پاکستان کے اندر سیاسی عدم استحکام سے۔

گذشتہ برس سمتبر میں عہدہ صدارت سنبھالنے کے بعد سے صدر زرداری کے گرد چند مشیروں، خاندان کے افراد اور ان لوگوں کا ٹولہ ہے جن سے ان کا تعلق دوران قید بنا اور جن میں سے کئی غیرمنتخب ہیں۔

ایسے میں سرکاری اہلکار ابہام کا شکار ہیں کہ دراصل چارج کس کے پاس ہے۔ ان میں ان کے سابق ڈاکٹر عاصم حسین بھی شامل ہیں جو کراچی میں ایک ہسپتال چلانے کے علاوہ پیٹرولیم پر حکومت کے مشیر کے فرائض بھی انجام دے رہے ہیں۔ حالانکہ ان کا اس شعبے میں کوئی تجربہ نہیں۔

اخبار کے مطابق تریپن سالہ آصف زرداری نے انٹرویو کی ایک درخواست مسترد کر دی تھی تاہم ان کے ترجمان فرحت اللہ بابر کے مطابق صدر حکومت میں بہترین لوگوں کو لانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ انہوں نے ان کی جانب سے کسی کے خلاف نازیبا زبان کے استعمال کیے جانے کے الزام سے بھی انکار کیا۔

صدر کے متنازع فیصلوں میں سے ایک سوات میں طالبان کے نفاذ شریعت کے مطالبے کے سامنے سرخم تسلیم کرنا ہے۔ اس معاہدے نے امریکہ کو بھی حیران کر دیا جسے خدشہ ہے کہ طالبان اس سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔

صدر زرداری اپنی اہلیہ کے قتل کے بعد اچانک پاکستان کے طاقتور ترین سیاستدان کے طور پر ابھر کر سامنے آئے۔ ماضی میں وہ پولو کے لیے اپنے شوق اور بدعنوانی کی وجہ سے معروف تھے۔ تازہ سروے کے مطابق ان کی مقبولیت میں کمی آئی ہے اور یہ اب سابق صدر پرویز مشرف کے برابر ہوگئی ہے۔

اپنے ہی چنے ہوئے وزیر اعظم کے ساتھ بھی سرکاری اہلکاروں کے مطابق صدر کے تعلقات حالیہ دنوں میں کشیدہ ہوگئے ہیں۔ وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کے قریبی رفقا کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم صدر کی جانب سے اپنے اختیارات میں کمی لانے میں تاخیر سے نالاں ہیں۔

فوج کی ناپسندیدگی بھی ہیں
 نومبر میں زرداری نے اعلان کیا کہ پاکستان اپنے ایٹمی ہتھیاروں کے استعمال میں پہل نہیں کرے گا۔ یہ اعلان فوج کے مؤقف اور اس حکمتِ عملی سے مختلف تھا کہ جس کے مطابق خطے میں خصوصاۙ بھارت کے ساتھ طاقت کا توازن برقرار رکھا جائے اوراسی وجہ سے فوجی قیادت نے اسے پسند نہیں کیا
 

اخبار کے مطابق ممبئی حملوں کی تحقیقات پر اختلاف کی وجہ سے مشیر قومی سلامتی محمود درانی کی برطرفی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے۔ محمود درانی اخبار کے مطابق زرداری کے کافی قریب تھے۔ تاہم فرحت اللہ بابر کسی اختلاف سے انکار کرتے ہیں۔

اخبار کے مطابق آصف علی زرداری نے ثابت کیا ہے کہ وہ پالیسیوں میں تبدیلیوں پر رضامند ہیں۔ جس کی فوج کے سربراہ جنرل اشفاق پرویز کیانی مخالفت کرتے ہیں۔ نومبر میں زرداری نے اعلان کیا کہ پاکستان اپنے ایٹمی ہتھیاروں کے استعمال میں پہل نہیں کرے گا۔ یہ اعلان فوج کے مؤقف اور اس حکمتِ عملی سے مختلف تھا کہ جس کے مطابق خطے میں خصوصاۙ بھارت کے ساتھ طاقت کا توازن برقرار رکھا جائے اوراسی وجہ سے فوجی قیادت نے اسے پسند نہیں کیا۔

زرداری اپنے صدارتی محل سے کم ہی باہر جاتے ہیں اور جب انہیں اپنے محل سے باہر جانا ہو تو اسلام آباد ایک ریڈ زون ایریا بن جاتا ہے، سڑکوں کی معمول کی ٹریفک کو پولیس چیک پوائنٹس اور سیمنٹ کی چوکیاں بنا کر روک دیا جاتا ہے۔ عیدین پر مقامی مسجد میں جا کر نماز پڑھنے کی روایات بھی ختم کردی گئی ہیں۔ زرداری اور اعلی حکام نے اس سال عیدالضحیٰ کی نماز اپنے صدارتی محل میں ادا کی۔

صدارتی ترجمان کا کہنا ہے کہ سیکیورٹی خدشات کی وجہ زرداری اپنے آپ کو ریڈ زون تک محدود رکھتے ہیں اور ان کی پوری کوشش ہوتی ہے کہ وہ اپنے محل کے اندر ہی عام شہریوں اور مقامی سیاستدانوں سے ملاقات کریں۔

اخبار کے مطابق حکام کہتے ہیں کہ زداری کا رویہ لوگوں کو اس مقام کی طرف لے کر جا رہا ہے جہاں وہ زرداری کے ساتھ کام نہ کرنے سے کوشش کریں گے۔

 
 
سندھ میں کیا بدلا
جمہوریت کے بعد سندھ میں کیا بدلا؟
 
 
صدر آصف علی زرداری بیلٹ کی بجائے بُلٹ
جمہوریت کو خطرہ شدت پسندی سے ہے
 
 
بلوچستان سال ہونے کو ہے!
بلوچستان سے وعدے جو وفا نہیں ہوئے۔
 
 
زرداری پیکیج
مشران کے ورثاء کےلیے اٹھائیس کروڑ روپے
 
 
صدر زرداری پاکستان کا موقف
’اجمل کا پاکستانی ہونا یقینی نہیں‘
 
 
دھوکہ کھاگئے!
غلط فون پر صدر زرداری دھوکہ کھاگئے
 
 
وال سٹریٹ انٹرویو
’صدر زرداری نے ایسے نہیں کہا تھا‘
 
 
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد