BBC navigation

’دہشت گردوں کو شہید کہنا، پاکستانی فوج کی توہین ہے‘

آخری وقت اشاعت:  اتوار 10 نومبر 2013 ,‭ 17:14 GMT 22:14 PST

سید منور حسن نے کالعدم تحریکِ طالبان کے سربراہ حکیم اللہ محسود کو ’شہید‘ قرار دیا اور آئی ایس پی آر کے مطابق ایسا بیان ہزاروں پاکستانی معصوم شہریوں اور پاکستانی فوجیوں کی بے عزتی ہے

پاکستانی فوج کے ترجمان ادارے انٹر سروسز پبلک ریلشنز نے جماعت اسلامی کے امیر سید منور حسن کی جانب سے ایک ٹی وی پروگرام میں حکیم اللہ محسود کو ’شہید‘ قرار دینے کو ’غیر ذمہ دارنہ اور گمراہ کن‘ قرار دے کر اس کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے۔

سید منور حسن نے کالعدم تحریکِ طالبان کے سربراہ حکیم اللہ محسود کو ’شہید‘ قرار دیا تھا اور آئی ایس پی آر کے مطابق ایسا بیان ہزاروں پاکستانی معصوم شہریوں اور پاکستانی فوجیوں کی بے عزتی ہے۔

کلِک ہمارے اصل جنرل

کلِک ’جماعتِ اسلامی اور طالبان کا ایک مؤقف‘

آئی ایس پی آر کے ترجمان نے سید منور حسن کی جانب سے اس بیان کو ان کی جانب سے ’سیاسی فائدے کے لیے پیدا کی گئی منطق‘ کا نتیجہ قرار دیا۔

آئی ایس پی آر کے بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اس نقطۂ نظر کے خلاف سامنے آنے والے عوامی ردِ عمل نے یہ ظاہر کر دیا ہے کہ پاکستانی کسے ریاست اور کسے اس کا دشمن مانتے ہیں۔

آئی ایس آر کے بیان میں مزید لکھا گیا ہے کہ ’شہدا کے خاندانوں اور ان کی قربانیوں کو سید منور حسن سے توثیق کی ضرورت نہیں ہے اور اس طرح کے گمراہ کن اور ذاتیات پر مبنی بیانات پر کوئی تبصرہ نہیں کیا جا سکتا۔ تاہم امیر جماعت اسلامی کی جانب سے آنے والا یہ بیان تکلیف دہ اور بدقسمتی ہے کہ جس جماعت کے سربراہ مولانا مودودی اسلام کی خدمات کی وجہ سے عزت کی نگاہ سے دیکھے جاتے ہیں ان کی جماعت کے سربراہ ایسی بات کر رہے ہیں۔‘

"شہداء کے خاندانوں اور ان کی قربانیوں کو سید منور حسن سے توثیق کی ضرورت نہیں ہے اور اس طرح کے گمراہ کن اور ذاتیات پر مبنی بیانات پر کوئی تبصرہ نہیں کیا جا سکتا ہے۔ تاہم امیر جماعت اسلامی کی جانب سے آنے والا یہ بیان تکلیف دہ ہے جس جماعت کے سربراہ مولانا مودودی اسلام کی خدمات کی وجہ سے عزت کی نگاہ سے دیکھے جاتے ہیں۔"

آئی ایس پی آر

آئی ایس پی آر کے ترجمان نے اپنے بیان میں مطالبہ کیا ہے کہ سید منور حسن پاکستانی عوام اور فوج کے شہدا کے خاندانوں کے جذبات اور احساسات کو ٹھیس پہنچانے پر غیر مشروط معافی مانگیں جن کے پیاروں نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں اپنی جانیں دی ہیں۔

بیان میں یہ بھی توقع ظاہر کی گئی کہ جماعت اسلامی اس موضوع پر اپنا جماعتی موقف واضح کرے۔

یاد رہے کہ یکم نومبر کو پاکستان کے زیرِ انتظام قبائلی علاقے شمالی وزیرستان میں دو امریکی ڈرون حملوں میں کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے سربراہ حکیم اللہ محسود ہلاک ہو گئے تھے۔

حکیم اللہ محسود کی ہلاکت کے بعد جماعت اسلامی کے امیر سید منور حسن نے انہیں شہید قرار دیا جس پر ملک کے مختلف طبقات کی جانب سے شدید ردِ عمل سامنے آیا۔

کالعدم تحریک طالبان پاکستان کے سربراہ حکیم اللہ محسود یکم نومبر کو ایک امریکی ڈرون حملے میں ہلاک ہو گئے تھے

امیر جماعت اسلامی کے اس بیان کے بعد جمعیت علمائے اسلام فضل الرحمان گروپ کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے بھی اسی پیرائے میں ایک بیان دیا۔

مولانا فضل الرحمان نے پارلیمنٹ ہاؤس کے باہر صحافیوں کو بتایا کہ ’امریکہ جس کو قتل کرے گا اگر وہ کتا بھی ہوگا تو میں اسے شہید کہوں گا۔‘

یاد رہے کہ مولانا فضل الرحمان کے اس بیان پر اسلام آباد ہائی کورٹ کے ایک جج نے ان کے خلاف فُل بینچ تشکیل دینے سے متعلق درخواست ابتدائی سماعت کے لیے منظور کرتے ہوئے اسے اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس انور خان کاسی کو بھجوا دیا تھا۔

درخواست گُزار شاہد اورکزئی کا کہنا تھا کہ چونکہ اسلام پاکستان کا سرکاری مذہب ہے اس لیے مولانا فضل الرحمن سرکاری مذہب کی توہین کے مرتکب ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔