الیکشن کمیشن کی تشکیلِ نو کی درخواست مسترد

آخری وقت اشاعت:  بدھ 13 فروری 2013 ,‭ 07:53 GMT 12:53 PST

پاکستان کی سپریم کورٹ نے تحریک منہاج القرآن کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری کی الیکشن کمیشن کی تشکیلِ نو کی درخواست مسترد کر دی ہے۔

بدھ کو تیسرے دن ڈاکر طاہر القادری کے دلائل سنننے کے بعد عدالت نے مختصر حکم میں کہا کہ درخواست گزار اپنا موقف ثابت کرنے میں ناکام رہے ہیں۔

عدالت نے دوہری شہریت رکھنے کی بناء پر ڈاکٹر طاہر القادری کے انتخابات پر حصہ لینے پر پابندی عائد کر دی۔

اس سے قبل سماعت کے دوران ڈاکٹر طاہر القادری اور چیف جسٹس کے درمیان نسبتاً تند جملوں کا تبادلہ بھی ہوا۔

مقدمے کی سماعت کے بعد ڈاکٹر طاہرالقادری نے سپریم کورٹ کے احاطے میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ان کا تین روز سے ٹرائل کیا جا رہا ہے اور ان کی دوہری شہریت کے حوالے سے اعتراضات ہو تے رہے۔

ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا کہ ان کی اصل پٹیشن کی سماعت ہی نہیں کی گئی اور ’عدالت نے دوہری شہریت کی بنا پر مجھ سمیت ملین افراد کی نیت پر شک کیا‘۔

منہاج القرآن کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری نے عدلیہ کے بارے میں جس انداز سے بات کی اسے بعض مبصرین سخت قرار دے رہے ہیں۔

خیال رہے کہ منگل کو چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے پیٹیشن کی سماعت کرتے ہوئے کہا تھا کہ ملک کا الیکشن کمیشن کافی غور و غوص کے بعد تشکیل پایا ہے اور اس کو عدالت خراب نہیں کرے گی۔

سماعت کے دوران چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ اگر کوئی غیر ملکی پاکستان کے حساس معاملات کے متعلق درخواست لے کر آئے تو ہم اسے نہیں سنیں گے۔

انھوں نے کہا کہ بیرون ملک سے آئے ہوئے شخص کو ملک کا سیاسی منظرنامہ تبدیل کرنے کی اجازت نہیں دی جا سکتی۔

منگل کو سماعت کے دوران ڈاکٹر طاہر القادری نے اپنی دوہری شہریت کے بارے میں تحریری جواب جمع کروایا اور اس حوالے سے بینچ کے سوالات کے جواب دیے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔