BBC navigation

اسلام آباد: توہین مذہب پر مسیحی بچی گرفتار

آخری وقت اشاعت:  اتوار 19 اگست 2012 ,‭ 00:30 GMT 05:30 PST

پولیس کے مطابق مسیحی بچی کو توہین مذہب کی دفعہ دوسو پچانوے بی کے تحت گرفتار کیا گیا ہے

پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد میں پولیس نے ایک بارہ سالہ مسیحی بچی کو توہین مذہب کے قانون کے تحت مقدمہ درج کر کےگرفتار کیا ہے۔

رمشاء نامی مسیحی بچی پر الزام ہے کہ اس نے قرآنی قاعدے کی بحرمتی کرنے کے بعد اس کو نذر آتش کیا۔

اسلام آباد میں رمنا پولیس سٹیشن کے ایس ایچ او قاسم نیازی نے بی بی سی کے نامہ نگار ذوالفقار علی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ رمشاء مسیح کو جمعے کو گرفتار کیا گیا تھا۔

ان کا کہنا ہے کہ اس بچی کو اسی روز چودہ دن کے جوڈیشل ریمانڈ پر اڈیالہ میں نابالغوں کے جیل میں منتقل کیا گیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ اس مسیحی بچی کو توہین مذہب کی دفعہ دوسو پچانوے بی کے تحت گرفتار کیا گیا ہے۔

اس دفعہ کے مطابق کوئی بھی شخص جان بوجھ کر قرآن یا اس کے کسی حصے کی بحرمتی کرے، نقصان پہنچائے یا توہین آمیز طریقے سے استعمال کرے اس کے لیے عمر قید کی سزا مقرر ہے۔

پولیس کا کہنا ہے اس بچی کا تعلق اسلام آباد کے ایک گاؤں مہر آبادی سے ہے۔

پولیس کے مطابق اس بچی کو ایک مقامی نوجوان کی شکایت پرگرفتار کیا گیا۔

دوسری جانب کرسچن ان پاکستان نامی ویب سائٹ کا کہنا ہے کہ اس بچی پر قرآن کے اوراق نذر آتش کرنے کا جھوٹا الزام عائد گیا ہے۔

ویب سائٹ کے مطابق وہ ڈون سنڈروم میں مبتلا ہے۔ ڈون سنڈروم ایک ایسی بیماری ہے جس میں بچہ ذہنی طور پر کمزور ہوتا ہے۔

پاکستان میں ایک اندازے کے مطابق تیس لاکھ عیسائی باشندے آباد ہیں۔

پاکستان میں نہ صرف غیر مسلم بلکہ مختلف فرقوں سے تعلق رکھنے والے مسلمان بھی توہین رسالت کے قانون کی زد میں آتے رہے ہیں۔

اس قانون کے غلط استعمال کے خلاف آواز اٹھانے پر پنجاب کے سابق گورنر سلمان تاثیر اور سابق وزیر برائے اقلیتی امور شہباز بھٹی کو بھی قتل کیا جا چکا ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔