BBC navigation

ثناء سنگت کی ہلاکت پر بلوچستان میں ہڑتال

آخری وقت اشاعت:  منگل 14 فروری 2012 ,‭ 12:43 GMT 17:43 PST

کراچی میں بھی ثناء بلوچ کی ہلاکت پر احتجاجی ریلی نکالی گئی

بلوچ ری پبلکن پارٹی کے مرکزی رہنماء ثناء سنگت بلوچ کی مسخ شدہ لاش ملنے کے خلاف تین روزہ ہڑتال کی اپیل پر بلوچستان کے زیادہ تر حصوں میں منگل کو نظامِ زندگی متاثر ہوا ہے۔

کوئٹہ سے بی بی سی کے نامہ نگار ایوب ترین کے مطابق منگل کو کوئٹہ اور اس کے مضافاتی علاقوں کے علاوہ صوبے کے دیگر بڑے شہروں میں شٹر ڈاؤن ہڑتال رہی جس کے باعث نہ صرف تعلیمی ادارے بند رہے بلکہ قومی شاہراہوں پر ٹریفک بھی قدرے کم تھا۔

ثناء سنگت کی لاش گذشتہ روز تربت کے علاقے مرغاب سے ملی تھی اور انہیں منگل کو مستونگ کے علاقے کڈکوچہ میں سپردِ خاک کر دیا گیا۔

ثناء سنگت بلوچ سات دسمبر دو ہزار نو کو مستونگ سے سبی جاتے ہوئے کولپور کے مقام سے لاپتہ ہوئےتھے۔

بلوچ ری پبلکن پارٹی کے ترجمان شیر محمد بگٹی نے کہا کہ ثناء سنگت بلوچ کی مسخ شدہ لاش کا ملنا بلوچ دشمن پالیسوں کا تسلسل اور امریکہ میں بلوچستان کے مسئلے پر ہونے والی سماعت کا ردعمل ہے۔

شیر محمد بگٹی نے کہا کہ اس طرح کی قربانیوں سے بلوچ تحریک آزادی کو تقویت ملتی ہے اور بلوچ نوجوانوں میں تحریک آزادی کا جذبہ مزید تیز ہو جاتا ہے۔

تاہم بی آرپی کے مرکز ی جنرل سیکرٹری ڈاکٹر بشیر عظیم نے سنگت ثناء بلوچ کی ہلاکت کی ذمہ داری پاکستان کے خفیہ اداروں پر عائد کی اور کہا کہ ’فوج اور دیگرادارے اب لاپتہ افراد کو مار کر یہ ثابت کرنے کی کوشش کررہے ہیں کہ ان کے پاس کوئی شخص نہیں ہے‘۔

کوئٹہ کے مضافاتی علاقوں کے علاوہ صوبے کے دیگر بڑے شہروں میں شٹر ڈاؤن ہڑتال رہی

ثناء بلوچ کی ہلاکت کے خلاف کراچی میں بلوچ ہیومن رائٹس آرگنائزیشن، بلوچ ریپبلکن پارٹی اور وائس فار مسنگ پیپلز کے کارکنوں نے بھی احتجاج کیا جس میں ثنا سنگت کی بہن زرینہ بلوچ نے بھی شرکت کی۔

نامہ نگار ریاض سہیل کے مطابق ان کارکنوں کا کہنا تھا کہ ثنا کی بازیابی کے لیے متعدد بار پارلیمنٹ کے باہر اور دیگر شہروں میں احتجاجی کیمپ لگائے گئے اور یہ تمام بے سود نکلے۔

وائس فار مسنگ پیپلز کے وائس چیئرمین عبدالقدیر بلوچ نے ثنا سنگت کی ہلاکت کو امریکی کانگریس میں بلوچستان مسئلے پر ہونے والی بحث کا ردعمل قرار دیا۔

دوسری جانب سوموار اور منگل کی درمیانی شب کو وندر کے علاقے سے دو افراد کی مسخ شدہ لاشیں برآمد ہوئیں اور ورثاء نے ایک لاش کی شناخت نواب خیربخش مری کے دست راست، مری قبیلے کے معروف رہنما حاجی جان محمد مری اور دوسرے کی شناخت بشکیا بگٹی کے نام سے کرلی ہے۔

حاجی جان محمد مری کوایک ہفتہ قبل تین دیگر ساتھیوں کے ہمراہ نامعلوم افراد نے کراچی سے اغواء کیا تھا جبکہ بشکیا بگٹی تین ماہ قبل لسبیلہ سے لاپتہ ہوئے تھے۔

اسی بارے میں

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔